الوادع اے مادر گرامی

الوادع اے مادر گرامی

چند  دن  بعد  حضرت آمنہ  اور  ننھے  محمد سفر  کے  لئے  تیار  ہوگئے  تو  جناب  عبدالمطلب  نے  امِ  ایمن  کو  بھی  ان  دونوں  کی  مدد  کے  لئے  ساتھ  بھیج  دیا  ۔  یہ  لوگ  یثرب  کی  جانب  روانہ  ہوگئے  ۔  وہ  جتنا  مکہ  سے  دور  جاتے  تھے  اتنا  ہی  موسم  بہتر  ہوتا  جا  رہا  تھا  ۔  یہ  مختصر  سا  قافلہ  بغیر  کسی  خاص  پریشانی  سے  یثرب  پہنچ  گیا  ۔  حضرت  آمنہ  ننھے  محمد  کو  حضرت  عبداللہ  کے  مزار  پر  لے  گئیں  ۔  دونوں  وہاں  جا  کر  قبر  کے  نزدیک  زمین  پر  بیٹھ  گئے  ۔  جناب  آمنہ  نے  اپنا  ہاتھ  قبر  کی  مٹی  پر  رکھا  اور  دھیرے  وسے  کہا  "عبداللہ  میں  آپ  کے  بیٹے  کو  آپ  کے  پاس  لے  کر  آئی  ہوں  ۔  اس  کے  بعد  سر  جھکا  کر  رونے  لگیں  ۔  ننھے  محمد  اپنی  ماں  کو  روتا  دیکھ  کر  پریشان  ہوگئے  ۔  انہوں  نے  ماں  کے  گلے  لگ  کر  بولے  ،  اماں  !  گریہ  نہ  کریں  بابا  کو  تکلیف  ہوگی ۔ ”  بی  بی  آمنہ  نے  اپنے  بیٹے  کی  بات  سن  کر  رخساروں  سے  سے  آنسو  صاف  کئے  اور  حضرت  ‏‏محمد  کو  اپنے  رشتہ  داروں  کے  گھر  کے  گئیں  جو  یثرب  میں  رہتے  تھے  ۔  بی  بی  آمنہ  اور  حضرت  محمد  ایک  مہینہ  یثرب  میں  رہے ۔ دونوں روزانہ  جناب  عبداللہ  کی  قبر  کے  نزدیک  مزید  کچھ  عرصہ  قیام  کرنا  چاہتی  تھیں  لیکن  وہ  جانتی  تھیں  کہ  جناب  عبدالمطلب  مکہ  میں  پریشان  ہوں  گے  اور  ان  کا  انتظار  کر  رہے  ہوں  گے  ۔  لہذا  ایک  مرتبہ  پھر  وہ  سفر  کے  لئے  تیار  ہو  کر  مکہ  کی  جانب  روانہ  ہو  گئیں  ۔  بی  بی  آمنہ  جتنا  یثرب  سے  دور  ہو  رہی  تھیں،  اتنا  ہی  زیادہ  انہیں  جناب  عبداللہ  یاد  آرہے  تھے  لیکن  وہ  جلد  از  جلد  مکہ  پہنچنا  چاہتی  تھیں  ۔  اس  لئے  انہوں  نے  سفر  جاری  رکھا  ۔  راستے  میں  ایک  گاؤں  کے  قریب  پہنچے  جس  کا  نام  "ابواء”  تھا  ۔  بی  بی  آمنہ  کی  طبیت  اچانک  خراب  ہو گئی  اس  لئے  وہ  اونٹ  سے  اتر  کر  زمین  پر  لیٹ  گئیں  تاکہ  کچھ  آرام  کر  لیا  جائے  ۔  ان  کا  بدن  بخار  میں  تپ  رہا  تھا  اور  وہ  بہت  مشکل  سے  سانس  لے  رہی  تھیں  ۔  ننھے  محمد  اپنی  ماں  کے  گرد  چکر  لگا  رہا  تھا  ۔  امِ  ایمن  گاؤں  میں  کسی  طبیب  کی  تلاش  میں  چلی  گئیں  ۔  بی  بی  آمنہ  کی  حالت  لمہ  بہ  لمہ  خراب  سے  خراب  تر  ہوتی  جارہی  تھی  جب  امِ  ایمن  ایک  بوڑھی  عورت  کو  لے  کر  وہاں  پہنچی  تو  بی  بی  آمنہ  اس  دنیا  سے  رخصت  ہو  چکی  تھیں  ۔  امِ  ایمن  یہ  دیکھ  کر  دھاڑیں  مار  کر  رونے  لگیں  ۔  ابواء  کے  لوگوں  نے  آکر  بی  بی  آمنہ  کو  وہاں  کے  قبرستان  میں  دفن  کردیا  تو  ‏محمد  نے  دھیمے  لہجے  میں  اپنی  ماں  سے  کہا  ‘اماں  آپ  بھی  مجھے  چھوڑ  گئیں !!  ‏محمد  وہیں  اپنی  ماں  کی  قبر  کے  پاس  رکنا  چاہتے  تھے  لیکن  امِ  ایمن  نے  کہا  کہ  آپ  کے  دادا  آپ  کے  انتظار  میں  ہوں  گے  اس  لئے  آپ  مکہ  چلیں  ۔  چنانچہ  محمد  اونٹ  پر  سوار  ہوکرمکہ  پہنچ  گئے  ۔ جناب  عبدالمطلب  نے  ان  کا  استقبال  کیا  لیکن  جب  انہیں  بی  بی  آمنہ  نظر  نہ  آئیں  تو  حیرت  سے  ان  کے  بارے  میں  پوچھا  ۔  امِ  ایمن  نے  روتے  ہوئے  جواب  دیا  کہ  راستے  میں  آتے  ہوئے  ابواء  کے  مقام  پر  بی  بی  آمنہ  کا  انتقال  ہوگیا  ۔  عبدالمطلب  بہت  غمزدہ  ہوئے  اور  اپنے  پوتے  کو  سینے  سے  لگا  لیا  اور  پھر  اپنے  گھر  لے  آئے  ۔  اس  وقت  محمد  کی  عمر  چھ  سال  تھی  ۔  اب  وہ  اپنے  دادا  کے  ساتھ  رہنے  لگے  ۔  اب  وہ  ان  کے  دادا ہی  نہیں  بلکہ  باپ  بھی  تھے  اور  ماں  بھی  ۔  حضرت محمد  کو  اپنے  دادا   عبدالمطلب  سے  بہت  محبت  تھی  اور  حضرت  عبدالمطلب  بھی  ‏حضرت  ‏محمد  سے  بہت  محبت  کرتے  تھے  ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے