انسداد تجاوزات آپریشن میں مداخلت پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل کے خلاف مقدمہ

کراچی میں پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل شیخ کے خاندانی فارم ہاؤسز کے خلاف تجاوزات کیخلاف کارروائی کا مقدمہ چل رہا ہے۔

کورنگی کے رہائشی کی شکایت پر میمن گوٹھ پولیس اسٹیشن میں اپوزیشن لیڈر سندھ اسمبلی حلیم عادل شیخ سمیت 70 افراد کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

اس قانونی چارہ جوئی میں امن کی خلاف ورزی ، مالی نقصان اور سرکاری ملازمین پر حملے ، بشمول قتل کی کوشش ، حکومت میں مداخلت اور دھمکیاں دینے کی دفعات بھی شامل ہیں۔ اس ٹیم کو مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا ، مظاہرین نے سرکاری عملے پر پتھراؤ کیا اور کار کی کھڑکیوں کو توڑ دیا۔

اس ضمن میں سندھ کے وزیر اطلاعات و بلدیات ناصر حسین شاہ نے کہا کہ تجاوزات کے خلاف آپریشن چیف جسٹس کے حکم پر کیا جارہا ہے۔ حلیم عادل چیخ رہا تھا کہ اس کے اہل خانہ کے خلاف کارروائی کی گئی ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ اب تک اربوں مالیت کی 500 ایکڑ سے زیادہ سرکاری اراضی کو ختم کردیا گیا ہے ، جبکہ انتظامیہ کا کہنا ہے کہ اس زمین کو پولٹری فارمنگ اور زرعی مقاصد کے لئے 30 سالوں کے لئے لیز پر دیا گیا تھا ، لیکن اس زمین کو تجارتی مقاصد کے لئے استعمال کیا جارہا تھا۔ ۔

دوسری جانب حلیم عادل شیخ نے حکومت سندھ کی کارروائی کو سیاسی انتقام قرار دیا ہے جبکہ پی ٹی آئی رہنما فردوس شمیم ​​نقوی نے چیف جسٹس سے از خود نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

Summary
انسداد تجاوزات آپریشن میں مداخلت پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل کے خلاف مقدمہ
Article Name
انسداد تجاوزات آپریشن میں مداخلت پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل کے خلاف مقدمہ
Description
کراچی میں پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل شیخ کے خاندانی فارم ہاؤسز کے خلاف تجاوزات کیخلاف کارروائی کا مقدمہ چل رہا ہے۔
Author
Publisher Name
jaun news
Publisher Logo

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے