بقیتہ اللہ کون ہے (پارٹ 2)

بقیتہ اللہ کون ہے (پارٹ 2)

نام  و  نسب  ؛

جو  اپنے  جد  برزگوار    پیغمبر حضرت محمد(ص) کے  بالکل  ہمنام  اور  صورت  و  شکل  میں  ہو  بہو  ان  کی  تصویر  ہیں ۔  والدہ  گرامی  آپ  کی  بی بی  نرجس  خاتون  تھیں  جو    قیصر  روم  کی  پوتی  اور  شمعون  وصی  حضرت  عیسیٰ  کی  اولاد  سے  تھیں  ۔  امام  حسن  عسکری  کی  ہدایت  سے  حضرت  کی  بزرگ  مرتب  ہمشیرہ  حلیمہ  خاتون  نے  ان  مسائل  دینیہ  اور  احکامِ  شرعیہ  کی  تعلیم  دی  تھی  ۔ 

القاب  و  خطاب 

ائمہ  معصومین  میں  حضرت  علی  بن  ابی  طالب  کے  بعد  سب  سے  زیادہ  القاب  بقیتہ اللہ  کے  ہیں  جن  میں  زیادہ  مشہور  درج  ذیل  خطابات  ہیں  ۔

1:  المہدی 

یہ  ایک  ایسا  خطاب  ہے  جو  نام  کا  قائم  مقام  بن  گیا  ہے  اور  پیشینگوئیاں  جو  آپ  کے  وجود  کے  متعلق  پیغمبر  اکرمۖ  اور  دیگر  آئمہ  معصومین  کی  زبان  پر  مہدی  آیا  ہے  ۔  مہدی  کے  لفظ  "ہدایت  ہائے  ہوئے”  کے  ہیں  ،  اسی  لحاظ  سے  کہ”اصل  ہادی  راستہ  بتانے  والی  ذات  خالق  ہے  جس  کے  لحاظ  سے  خود  پیغمبر  سے  خطاب  کرکے  قرآن  کریم   میں  یہ  آیت  آتی  ہے  (انک  لاتھدی  من  اجبت  ولکن  اللہ  یھدی  من  یشاء)  تمہارے  بس  کی  بات  نہیں  ہے  جس  کو  چاہو  تم  ہدایت  کرتا  ہے  ۔  اور  اسی  کے  اعتبار  سے  سورہ  الحمد  میں  بارگاہ  الہٰی  میں  دعا  کی  گئی  ہے  ۔  اھدنا الصراطالمستقیم  یعنی  ہم  کو  سیدھے  راستے  پر  لگا  دے  ۔  اس  فقرہ  کو  خود  پیغمبر  اور  آئمہ  معصومین  بھی  اپنی  زبان  پر  جاری  کرتے  تھے  اس  لیے  خداوند  عالم  کی  ہدایت  کے  لحاظ  سے  ان  رہنما  یانِ  دین  کو  مہدی  کہنا  صحیح  تھا  جو  صفت  کے  لحاظ  سے  سب  ہی  بزرگوار  تھے  اور  خطاب  کے  لحاظ  سے  حضرت  امام  منتظر  کے  ساتھ  مخصوص  ہوگیا  ۔

2:  القائم 

یہ  لقب  ان  احادیث  سے  ماخوذ  ہے  جس  میں  جناب  پیغمبر  نے  فرمایا  ہے  کہ  "دنیا  ختم  نہیں  ہوسکتی  جب  تک  میری  اولاد  میں  سے  ایک  شخص  قائم  (کھڑا )  نہ  ہو  جو  دنیا  کو  عدل  و  انصاف  سے  بھر  دے 

3:  صاحبِ الزمان

اس  اعتبار  سے  کہا  جاتا  ہے  کہ  آپ  ہمارے  زمانے  کے  رہنمائے  حقیقی  ہیں  ۔  اس  لی  آپ  کو  صاحبِالزمان  کہا  جاتا  ہے

4:  حجت  خدا

ہر  نبی  اور  امام  اپنے  دور  میں  خالق  کی  حجت  ہوتا  ہے  جس  کے  ذریعہ  سے  ہدایت  کی  ذمہ  داری  جو  اللہ  پر  ہے  وہ  پوری  ہوتی  ہے  اور  بندوں  کے  پاس  کوتاہیوں  کے  جو  راز  کی  کوئی  سند  نہیں  رہتی  ۔  چونکہ  ہمارے  زمانے  میں  رہنمائی  خلق  کی  ذمہ  داری  حضرت  سے  پوری  ہوئی  ہے  اس  لیے  قیام  قیامت  "حجت  خدا”  آپ  ہیں 

5:  منتظر 

چونکہ  امام  مہدی  کے  ظہور  کی  بشارتیں  برابر رہنمایان  دین  دیتے  رہے  ہیں  ،  یہاں  تک  کہ  صرف  مسلمان  میں  نہیں  بلکہ  دوسرے  مذاہب  میں  بھی  چاہے  نام  کوئی  دوسرا  ہو  مگر  ایک  آنے  والے  کا  آخر  زمانہ  میں  انتظار  ہے  ۔  ولادت  کے  قبل  سے  پیدائش  کا  انتظار  رہا  اور  اب  غیبت  کے  بعد  کو  ظہور  کا  انتظار  ہے  اس  لیے  آپ  خود  حکم  الہٰی  کے  منتظر    ہوتے  ہوئے  تمام  خلق  کے  لیے  منتظر  یعنی  مرکز  انتظار  ہیں  ۔  اس  لیے  آپ  کا  لقب  منتظر  بھی  ہے  ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے