حجت خدا کے منتظرین کے لیے علامات ظہور ، اجرکمہ اللہ

حجت خدا کے منتظرین کے لیے علامات ظہور ، اجرکمہ اللہ

علامات  ظہور

امام  جعفر  صادق  نے  فرمایا  کہ  حضرت  امام  مہدی  کے  ظہور  سے  پانچ  حادثے  رونما  ہونگے  ۔  یمن  کے  لوگوں  میں  سے  ایک  انقالابی  مرد  کی  تحریک  ،  سفیانی  کا  خروج  ،  آسمانی  فریاد  کہ  جو  ہر  جگہ  سنی  جائے  گی  بیدا  میں  زمین  کا  دھنس  جانا  اور  پاک  دامن  انسان  کا  قتل  ۔

۱۔  سفیانی  کا  خروج

امام  علی  سے  روایت  ہے  کہ  جب  امام  مہدی  کا  ظہور  ہو  گا  تو  اس  وقت  سے  پہلے  سفیانی  کا  خروج  ہوگا  ۔  یہ  شخص  جگر  خوار  عورت  کا  بیٹا  ہوگا  اور  ایک  خشک  صحرا  سے  ظہور  کرئے  گا  اور  یہ  شخص  کوفہ  اور  جلہ  کے  کنارے  پر  قبضہ  کرلے  گا  اس  کے  بعد  وہیں  اپنی  سلطنت  قائم  کرلے  گا  ۔

      بعض  روایت  سے  واضع  ہوتا  ہے  کہ  ظہور  سے  پہلے  سفیانی  شام  کے  ایک  منطقہ  سے  یہ  شخص  خروج  کرے  گا  ظاہری  طور  پر  دیندار  ہوگا  اور  اکثر  مسلمانوں  کو  فریب  دے  گا  اور  مسلمانوں  کی  زمینوں  پر  قبضہ  کرلے  گا  ۔  اور  ان  جگہوں  پر  قبضہ  کرے  گا  جن  کے  نام  یہ  ہیں  ۔  شام  ،  حمص  ،  فلسطین  ،  اردن  ،  قسرین  ،  عراق  میں  کوفہ  اور  نجف  میں  قتل  عام  کرے  گا  ۔  پھر  امام  مہدی  کا  ظہور  ہو  گا  ۔  اور  جب  اسے  ظہور  کا  پتا  چلے  گا  تو  یہ  جنگ  کے  لیے  اپنا  لشکر  تیار  کرے  گا  اور  مکہ  اور  مدینہ  کے  درمیان  بیداد  نام  کی  جگہ  پر  جنگ  ہوگئی  اور  اس کا  لشکر   تباہ  ہوجائے  گا  ۔

۲۔  سرِ  زمین  بیدا  کا  دھنس  جانا

بیدا  مکہ  اور  مدینہ  کے  درمیان  ایک  جگہ  کا  نام  ہے  جہاں  پر  خدا  کے  حکم  سے  سفیانی  لشکر  زمین  میں  دھنس  جائے  گا  ۔

۳:  یمانی  کا  خروج 

یمن  کا  ایک  سردار  قیام  کرے  گا  جو  حق  اور  عدالت  کی  دعوت  دے  گا  اس  کا  ذکر  بہت  سے  روایت  میں  ہوا  ہے  ان  میں  سے  ایک  روایت  ہے  کہ  خراسانی  ،  سفیانی  ،  اور  یمانی  کا  قیام  ایک  ہی  سال  ایک  ہی  مہینے  اور  ایک  ہی  دن  ہوگا  ۔  ان  کا  ظہور  امام  مہدی  کی  آخری  نشانی  ہے۔

۴۔  نفس  زکیہ  کا  قتل 

نفس  زکیہ  یعنی  ایسا  پاک  انسان  جو  کسی  بھی  گناہ  کا  مرتکب  نہ  ہوا  ہو  ہر  قسم  کے  جرم  سے  پاک  ہو  ۔  یہ  شخص  امام  مہدی  سے  مخلص  ہوگا  اور  نفس  زکیہ  امام  مہدی  کے  ظہور  کے  لیے  کوشش  کررہا  ہوگا  ۔  اور  جب  یہ  ایک  راستہ  پہ  امام  مہدی  کی  تلاش  کررہا  ہو  گا  تو  اسے  قتل  کردیا  جائے  گا  ۔  بعض  روایات  میں  نفس  زکیہ  کا  نام  حسنی  آیا  ہے  کیونکہ  یہ  مولا  حسن  کی  اولاد  سے  ہوگا  ۔  امام  باقر  سے  روایت  ہے  کہ  نفس  زکیہ  اور  امام  مہدی  کے  ظہور  کے  درمیان  15  دن  رات  سے  بھی  کم  کا  فاصلہ  ہوگا۔

۵۔  صیحہ  آسمانی

صیحہ  آسمانی  یعنی  آسمان  کی  آواز  ۔  بہت  سی  روایت  میں  اس  لفظ  کو  ندائ  ،  فزعہ  ،  صوت  کے  الفاظ  استعمال  ہوئے  ہیں  ۔  ان  سب    کے  ایک  معنی  ہیں  ۔  حضرت  جبرائل  (ع)  آسمان  سے  ندا  دیں  گے  اور  یہ  آواز  ہر  انسان  کو  اسی  کی  زبان  میں  سنائی  دے  گی  ۔  جوکہ  پورے  عالم  میں  سنائی  دے  گی  ۔  یہاں  تک  سوئے  ہوئے  بھی  بیدار  ہوجائیں  گے  ۔  اور  حق قائم  ہو  جائے  گا  اور  باطل  مٹ  جائے  گا  ۔  اور  پھر  ایک  نظام  قائم  ہوجائے  گا  ۔

٦۔  دجال  کا  خروج

دجال  کا  خروج  امام  مہدی  کی  آخری  نشانی  ہے  ۔  دجال  ایک  ایسا  شخص  ہے  کہ  جس  کا  کام  لوگوں  کو  ٰفریب  دینا  اور  اپنی  طرف  مائل  کرنا    ہے  یہ  شخص  بہت  سے  لوگوں  کو  جمع  کرئے  گا  اور  آخر  کار  حضرت  عیسیٰ  (ع)  کے  ہاتھوں  مارا  جائے  گا  ۔

"اللھم  عجل نولیک  الفرج”

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے