مدینہ نبی اکرم کا شہر (پارٹ2)

مدینہ نبی اکرم کا شہر (پارٹ2)

 

 ایک  نے  کہا  ہمیں  محمد  کو  مکہ  سے  نکلنے  نہیں  دینا  چاہیے  تھا  ۔  اب  تو  اس  کے  پاس  ایک  شہر  ہے  ایک  مسجد  ہے  اور  بہت  سے  لوگ  اس  کے  گرد  جمع  ہیں ۔ 

دوسرا  بولا  "کہتے  ہیں  کہ  محمد  (ص)  نے  حکومت  بھی  بنا  لی  ہے  اور  اب  سب  اس  کے  حکم  پے  چلتے  ہیں  ۔  "

تیسرا  بولا  ”  میرا  خیال  ہے  کہ  اب  ہم  ایک  بڑا  لشکر  جمع  کرلیں  جس  میں  مکہ  کے  تمام  جنگجوؤں  کو  شامل  کیا  جائے  اور  مدینے  پر  حملہ  کیا  جائے  اور  ‏محمد (ص)  اور  اس  کے  ساتھیوں  کو  قتل  کردینا  چاہیے۔”

تمام  کافروں  نے  اس  کی  بات  مان  لی  اور  جنگجوؤں  کا  ایک  بڑا  لشکر  تیار  کرکے  اپنے  گھوڑوں  پر  سوار  ہوکر  مدینے  کی  طرف  روانہ  ہوگئے۔لیکن  ایک  مرتبہ  پھر  اللہ  تعالیٰ  نے  مسلمانوں  کی  مدد  کی  ۔  چناچہ  دشمنوں  کے  حملے  کی  خبر  نبی  (ص)  کے  تک  پہنچ  گئی  ۔  نبی  اکرم  (ص)  نے  مسلمانوں  کو  جمع  کیا  اور  کافروں  کے  حملے  کے  بارے  میں  ان  کو  بتایا  اور  ان  سے  کہا  کہ  اب  دفاع  کرنے  کے  لئے  تیار  ہوجائیں  ۔  یہ  بات  سن  کر  مسلمانوں  نے  تلواریں  اٹھائیں  اور  مدینہ  سے  باہر  نکل  کر  ایک  کنویں  کے  پاس  پہنچ  گئے  اور  اپنے  دشمن  کا  انتظار  کرنے  لگے  ۔  یہاں  موجود  کنویں  کا  نام  "بدر ”  تھا  اس  لئے  اس  جنگ  کو  جنگِ  بدر  کہتے  ہیں ۔

جب  کفار  قریش  کا  لشکر  یہاں  پہنچا  تو  مسلمانوں  اور  کافروں  کے  درمیان  زبردست  جنگ  ہوئی  اس  جنگ  میں  مسلمانوں  کی  تعداد  بہت  کم  اور  کافروں  کی  تعداد  بہت  زیادہ  تھی  لیکن  مسلمانوں  نے  اپنے  ایمان  کی  بدولت  کافروں  کو  شکست  سے  دوچار  کردیا۔  اس  جنگ  میں  مسلمانوں  کو  بہت  بڑی  فتح  حاصل  ہوئی  ،  کیونکہ  بہت  سے  کافر  سردار  مارے  گئے  تھے  ۔  کافروں  کی  شکست  اور  مسلمانوں  کی  عظیم  فتح  کی  خبر  پورے  حجاز  میں  پھیل  گئی  ۔  لیکن  جو  کافر  یہ  نہیں  سمجھتے  تھے  کہ  خدا  سے  جنگ  نہیں  کی  جاسکتی  ،  وہ  انتقام  لینے  کے  لئے  بے  چین  تھے  ۔  اس  لئے  وہ  اگلے  سال  دوبارہ  ایک  بڑے  لشکر  کے  ساتھ  مدینہ  پر  حملہ  کرنے  کے  لئے  پہنچ  گئے۔  یہ  جنگ  مدینہ  کے  نزدیک  "احد”  نامی  ایک  پہاڑی  کے قریب  ہوئی  ۔  اس  لئے  اس  جنگ  کو  "جنگِ  احد ”  بھی  کہتے  ہیں۔ اس  جنگ  میں  حضرت  علی  اور  ان  کے  چچا  حضرت  حمزہ  بھی  موجود  تھے  ۔  جنگ  کی  ابتداء  میں  مسلمانوں  کو  کامیابی  حاصل  ہوئی  اور  کافر  میدان  سے  بھاگنے  لگے  ۔  رسول  (ص)  نے  مسلمانوں  کے  ایک  گروہ  کو  پہاڑ  پر  مقرر  کیا  تھا  تاکہ  کفار  اس  طرف  سے  حملہ  نہ  کرسکے  ۔  ان  لوگوں  نے  جب  دیکھا  کہ  کافر  بھاگ  رہے  ہیں  ۔  تو  یہ  سمجھے  کہ  جنگ  ختم  ہوگئی  ہے  ۔  اس  لیے  یہ  پہاڑی  سے  اتر  آئے۔  ان  کے  نیچے  اترتے  ہی  کافروں  نے  اس  پہاڑی  کے  پیچھے  چکر  کاٹ  کر  مسلمانوں  پر  حملہ  کردیا۔  جس  کی  وجہ  سے  متعدد  مسلمان  شہید  ہوگئے۔  اس   جنگ  میں  رسول  اللہ  (ص)  کے  چچا  بھی  شہید  ہوگئے  اور  پیغمبر  اکرم  (ص)  کے  دندان  مبارک  بھی  ٹوٹ  گئے۔  کافروں  نے  اللہ  کے  نبی  کو  زخمی  دیکھا  تو  خوشی  سے  چیخنے  لگے  ۔  "محمد  مارے  گئے”  ۔یہ  سن  کر  بہت  کر  بہت  سے  بزدل  مسلمان بھاگنے  لگے  لیکن  حضرت  علی  نے  اللہ  کے  رسول  (ص)  کو  تنہا  نہیں  چھوڑا  اور  ان  کی  حفاظت  کے  لی  جنگ  کرتے  رہے  ۔  جب  کافروں  نےدیکھا  کہ  حضرت  ‏محمد  (ص)  کو  قتل  کرنا  ناممکن  ہے  تو  وہ  جنگ  ختم  کرکے  چلے  گئے۔  وہ  سمجھ   رہے  تھے  کہ   اب  مسلمان  کا  کام  تمام  ہوچکا  ہے  ۔  لیکن  وہ  یہ  نہیں  جانتے  تھے  کہ  خدا  کے  دین  کو  مٹا  نہیں  سکتا۔  مسلمانوں  نے  اپنے  شہید ہونے  والے  ساتھیوں  کو  دفن  کیا  اور  زخمیوں  کو  اونٹوں  پر  بیٹھا  کر  مدینہ  لے  آئے  ۔  یہ  جنگ  مسلمانوں  کے  لئے  ایک  درس  تھا  کہ  کبھی  دشمن  کو  کمزور  نہیں  سمجھنا  چاہیے  ۔  ہجرت  کے  پانچوِیں  سال  ایک  بار  پھر  مکہ  سے  رسول  (ص)  کو  خبر  ملی  کہ  کفار  قریش  مدینہ  پر  حملہ  کرنے  کی  تیاری  کررہے  ہیں۔  اس  مرتبہ  انہوں  نے  تمام  قبیلوں  کو  جمع  کرکے  ایک  بہت  بڑا  لشکر  تیار  کرلیا  تھا  ۔  وہ  چاہتے  تھے  کہ  اس  حملے  میں  تمام  مسلمانوں  کو  قتل  کردیں  اور  مدینہ  کو  تباہ  برباد  کردیں  ۔  اس  مرتبہ  بھی  حضور  اکرم  (ص)  نے  تمام  مسلمانوں  کو  مشورہ  کرنے  کے  لئے  جمع  کیا  اور  انہیں  کافروں  کے  حملے  کی  اطلاع  دی۔

رسول  اللہ  (ص)  کے  ایک  صحابی  ،  جن  کا  نام  سلمان  فارسی  تھا  اور  وہ  ایرانی  تھے  ،  انہوں  نے  مشورہ  دیاکہ  دشمن  کے  راستے  میں  ایسی  خندق  (گڑھا)  کھودی  جائے  جس  کی  وجہ  سے  وہ  مدینہ  کے  قریب  آکر  اس  پر  حملہ  نہ  کر  سکیں  ۔  سب  لوگوں  نے  حضرت  سلمان  فارسی  کے  مشورہ  سے  اتفاق  کیا  ۔  پھر  دشمن  کے  راستے  میں  ایک  طویل  خندق  کھودی  گئی  ۔  اس  خندق  کو  کھودنے  میں  کئی  ماہ  لگ  گئے  ۔  تمام  مسلمانوں  نے  محبت  کی  اور  خود  اللہ  کے  رسول  (ص)  نے  بھی  زمین  کھودنے  میں  حصہ  لیا۔

  جب  کفار  مکہ  ،  مدینہ  کے  نزدیک  پہنچے  تو  دیکھا  کہ  مسلمان  ایک  بار  پھر  اپنے  دفاع  کے  لئے  پوری  طرح  تیار  ہیں۔  لیکن  اس  مرتبہ  انہوں  نے  دفاع  کا  ایک  جدید  طریقہ  دیکھا  کہ  مسلمانوں  نے  ایک  ایسی  خندک  کھود  رکھی  ہے  جس  سے  گزرنا  نا  ناممکن  ہے  ۔  یہ  دیکھ  کر  کافروں  نے  خندق  کے  ایک  اس  طرف  خیمے  گاڑ  دیئے  ۔  وہ  کوئی  ایسا  راستہ  تلاش  کررہے  تھے  جہاں  سے  وہ  خندق  عبور  کرسکیں۔  کئی  دن  گزرنے  کے  بعد  ایک  کافر  جس  کا  نام  عمر  و  بن  عبدود  نامی  ایک  نامی  گرامی  کافر  پہلوان  اپنے  چند  ساتھیوں  کے  ساتھ  کسی  نہ  کسی  طرح  خندق  عبور  کرکے  مسلمانوں  کی  طرف  آگیا  اور  جنگ  کے  لئے  کسی  مسلمان  بہادر  کو  طلب  کرنے  لگا۔  حضرت  علی  ان  جنگ  کرنے  کے  لیئے  آئے  اور  ان  سب  کو  قتل  کردیا۔ 

          ان  کی  اس  بہادری  اور  قربانی  پر  رسول  (ص)  نے  حضرت  علی  (ص)  کی  جنگ  کے  بارے  میں  فرمایا  "خندق  کے  دن  علی  کی  ایک  ضرب  جن  و  انس  کی  عبادت  سے  بڑھ  کر  ہے  ” 

    اس  ناکامی  کے  بعد  کئی  مہینوں  تک  کافر  وہیں  موجود  رہے  لیکن  جب  ان  خیمے  پھٹنے  لگے  اور  جانور  بیمار  ہونے  لگے  تو  وہ  لوگ  تنگ  آکر  مکہ  واپس  چلے  گئے  ۔  اب  کافر  پوری  طرح  مایوس  ہوچکے    تھے  ۔  وہ  سمجھ  گئے  تھے  کہ  اسلام  کو  ختم  نہیں  کیا  جا  سکتا۔  

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے