مدینہ نبی اکرم کا شہر

مدینہ نبی اکرم کا شہر

مسلمانوں  کو  تکلیفیں  پہنچانے  اور  ان  کو  اذیتیں  دینے  سے  کافروں  کو  کوئی  فائدہ  نہیں  ہوا  ۔  جتنی  اذتیں  بڑھتی  جا  رہی  تھیں  ،  مسلمانوں  کی  تعداد  میں  مسلسل  اضافہ  ہو  رہا  تھا  ۔  بت  پرستوں  نے  جب  دیکھا  کہ  حضرت  ‏محمد ص اپنی  دعوت  سے  دستبردار  نہیں ہو  رہے  ہیں  تو  انہوں  نے  ایک  منصوبہ  بنایا  ۔  چنانچہ  ایک  رات  قبیلہ  قریش  کے  تمام  کافر  سردار  آپس  میں  مشورہ  کرنے  کے  لئے  جمع  ہوئے  کہ  کس  طرح  سے  حضرت  ‏محمد  کا  راستہ  روکا  جائے  ؟  کافی  دیر  بعد  انہوں  نے  ایک  انتہائی  وحشیانہ  فیصلہ  کیا  کہ  ہر  قبیلے  اور  گروہ  کے  چند  آدمی  نوجوان  جو  رات  کی  تاریکی  میں  اللہ  کے  رسول  کے  گھر  پر  حملہ  کرکے  انہیں  قتل  کردیں  ۔  لیکن  اللہ  تعالٰی  نے  اپنے  رسول  کی  مدد  کی  اور  فرشتے  بھیج  کر  کافروں  کا  سارا  منصوبہ حضرت  ‏محمد  کو  بتا  دیا  اور  حکم  دیا  کہ  اب  مکہ  سےیثرب  چلے  جاؤ  ۔  حضرت  ‏محمد  نے  یہ  بات  سن  کر  اپنے  بہادر  چچازاد  بھائی  علی  کو  بتائی  ۔  حضرت  علی  فورا  ان  کی  مدد  کرنے  کے  لئے  تیار  ہو  گئے  اور  بولے  "آپ  جو  کہیں  گے  میں  اس  پر  عمل  کروں  گا  ”  ۔  حضرت  ‏محمد  نے  فرمایا  ‘  تمہیں  میرے  گھر  پر  رہنا  ہوگا  اور  میرے  بستر  پر  سونا  ہوگا  تاکہ  کافروں  کو  معلوم  نہ  ہوسکے  کہ  میں  چلا  گیا  ہوں ‘  میں  اپنی  جان  بھی  آپ  پر  قربان  کرنے  کے  لئے  تیار  ہوں  ۔  حضرت  علی  نے  جواب  دیا  ۔  اس  رات  حضرت علی  اپنی  جان  کی  بازی  لگا  کر  بسترِ  رسول  پر  سوگئے  اور  حضور  کافروں  کی  نگاہوں  سے  بچ  کر  مکہ  سے       باہر  نکل  گئے  ۔  جب  آدھی  رات  کے  وقت  تلواروں    سے  مسلح  نوجوانوں    اللہ  کے  رسول  کے  گھر  میں  داخل  ہو ئے  اور  بستر  کے  نزدیک  پہنچے  تو  یہ  دیکھ  کر  حیران  ہوگئے  کہ  وہاں  حضرت  محمدۖ  کی  جگہ  ان  کے  چچا ذاد  بھائی  سوئے  ہیں  ۔  ان  کا  یہ  منصوبہ  ناکام  ہوا  تو  ان  کو  بہت  غصہ  آیا  اور  رسول  اللہ  (ص)  کے  گھر  سے  باہر  نکل  آئے  اور  ہر  جگہ  حضور  (ص)  کو  تلاش  کرنے  لگے  ۔  کچھ  لوگ  مکہ  سے  باہر  نکل  آئے اور  پہاڑوں  کی  طرف  آپ  کو  تلاش  کرنے  لگے  آخیر  کچھ  لوگ  غار  کے  دھانے  تک  پہنچ  گئے  تھے  جہاں  آپ  چھپے  ہوئے  تھے  مگر  اللہ  کی  مدد سے  غارکے دہانے  پر ایک  مکڑی  نے  جالا  بنا  رکھا  تھا  اور  کبوتر  نے  انڈے  دے  رکھے  تھے  ۔  کافر  یہ  سمجھے  کہ  اگر  حضور (ص)  غار  میں  گئے  ہوئے  ہوتے  تو  جالا  ٹوٹ  جاتا  اور  کھونسلا  بھی  گر  گیا  ہوتا  ۔  اس  لئیے  وہ  غار  میں  داخل  نہیں  ہوئے  اور  ناکام  و  نامراد  ہو  کر  واپس  آگئے  ۔  اس  طرح  سے اللہ تعالیٰ کی  مدد  سے  اور  حضرت  علی  کی  قربانی  سے  رسول  (ص)  بخیر  و  عافیت  یثرب  پہنچ  گئے  ۔

  یثرب  کے  لوگوں  نے  آپ (ص)  کا  استقبال  کیا  اور  اپنے  شہر  کو  نبی  اکرم (ص)  کا  شہر  کہنے  لگے  ۔اس  کے  بعد  انہوں  نے  ایک  دوسروے  کی  مدد  سے  نبی  اکرم  (ص)  کے  لئے  ایک  گھر  بنایا  اور  اس  کے  برابر  میں  ایک  مسجد  بھی  بنائی  ۔  جو  مسلمان  کافروں  سے  تنگ  آ  کر  دوسرے  شہر  چلے  گئے  تھے  وہ  بھی  مدینہ  آنے  لگے  ۔  اس  لیے  مدینہ  میں  مسلمانوں  کی  تعداد  زیادہ  ہو  گی  ۔  اب  حضور (ص)  تنہا  نہیں  تھے  اور  بت  پرست  مسلمانوں  کو  تکلیفیں  نہیں  پہنچا  سکتے  تھے  ۔  لیکن  خدا  اور  رسول (ص)  کے  دشمن  اب  بھی  اپنی  ضد  پر  اڑے  ہوئے  تھے  ۔  وہ  ایک  بار  پھر  جمع  ہوئے  اور سازشیں   کرنے  لگے۔

جاری  ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔                                                      

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے